Kashmiri Poetry|کاشر شاعری
 


"صوفی شاعر گٔیہ تم شاعر یہنز ذاتی تہ ادبی زندگی خالص تصوف چھیہ روزمژ۔ لل چھیہ امہ خانوادچ زٹھ تہ شاہ غفور، سۅچھ کرال، رحیم صٲب، پرمانند، نعمہ صٲب، شاہ قلندر، رحمان ڈار، شمس فقیر، وہاب کھار، محمد سراج، احمد بٹہ وارۍ، وازہ محمود، صمد میر تہ احد زرگر چھہِ امکۍ باقی بٲژ۔ یمن منز چھہِ لل دیدِ پتہ سۅچھہ کرال، پرمانند، شمس فقیر تہ احد زرگر شاعری تہ فلسفہ کہ لحاظہ گاشرۍ منارن ہنز ہش حیثیت تھاوان۔

تصوف چھہ عشق تہ مستی ہند دنیا تہ فلسفہ۔ امہِ فلسفکۍ خواہ اسۍ وۅنۍ قایل آسو یا نہ آسو، اسہِ پییہِ یہ کتھ ماننۍ زِ یہ چھہ اکھ طاقتور قوت بٔنتھ واریاہس کالس انسانی زندگی متاثر کران رودمت۔ انسانی سماجس، تہذیبس تہ تمدنس اندر چھہ یہ رنگہ رنگہ تہ دور رس تبدیلی ین ہند ذریعہ ثابت سپدمت۔ خاص کر امکۍ وحدت الوجود فلسفن چھہ مذہبی تعصب، تنگ نظری تہ نابرابری سیتۍ زور آزمایی کٔرتھ، تتھ واریاہ کینہہ وسعت عطا کرمژ۔

صوفی چھہِ پزرس تام واتنچ کوشش کران۔ پزر (حقیقت) چھہ اکھ، سہ ہیکہِ نہ اکہِ کھۅتہ زیادہ ٲستھ۔ البتہ پزرکۍ تصور ہیکن واریاہ ٲستھ، مگر پزرکۍ تم سٲری تصور چھہِ نہ اصل پزر آسان۔ لہازا صوفی کُنہِ مڈہبکۍ، کٚنہِ دیشکۍ ٲسۍ تن، تمن چھیہ نہ کانہہ فرق آسان۔ تم چھہِ پزرکۍ تصور الگ تھٲوتھ، محض پزرک فہم (ادراک) تہ اظہار کران۔ اکھ اکۍ سندٮن مشاہدن، تجربن تہ بیانن ہند فایدہ تلان تہ تمن پنن وتہ ہاوک بناوان، تکیازِ تم چھہِ زانان زِ آفتاب کُنہِ تہِ برجہ کھسۍ تن، چھہ آفتابے۔ گۅلاب کُنہِ تہِ وارِ پھوٚلۍ تن، چھہ گۅلابے۔ تم چھہِ آفتابکۍ تہ گۅلابکۍ مشتاق، کُنہِ خاص برجکۍ یا پوشہِ وارِ ہندۍ چھہِ نہ۔ برجس یا پوشہِ وارِ سیتۍ محبت کرُن گوٚو نہ آفتابس تہ گۅلابس سیتۍ محبت کرُن۔ مذہبس تہ طریقتس چھیہ اتۍ نے فرق پیوان۔

مذہبی یا صوفی عقیدن ہنز بنیاد ہیکہِ خدایہ سندس وجودس پیٹھے ٲستھ، اگرچہ خدایہ سندس ذاتس تہ صفاتن ہنز ویژھنے متعلق ہیکن مختلف نظریہ ٲستھ بلکہ چھہِ تہِ۔ اسلامی مذہبی عقیدہ کنۍ چھیہ خدایہ سنز ذات انسانی عقلہِ، تجربہ، قیاسہ تہ بیانہ نشہِ پاک (ماوراے ادراک)۔ سہ چھہ کُن تہ تس چھہ نہ کانہہ شریک۔ یہ سورے کاینات کوٚر تمۍ بیہ بود (عدم) منزہ بود۔ انسان چھہِ تسندۍ پیدہ کرۍ متۍ بندہ (مخلوق) تہ سہ چھہ یہند پیدہ کرن وول رب (خالق)۔ تسنز ذات چھیہ تسنزِ پیدایشہ نشہِ اکھ بالکل بدون چیز۔ مگر اسلامی تصوفک نظریہ چھہ اتھ بالکل برعکس۔ بقول حضرت معروف الکرخی (815ء) تصوف چھہ "خدایی حقیقژن ہند فہم" یعنی عقلہِ، تجربہ تہ قیاسہ سیتۍ زاننک تہ پرزناونک نظریہ۔ یہ عقیدہ کتھہ پاٹھۍ گوٚو اسلامس اندر پیدہ، وزِ وزِ کمہ تبدیلی روزہ اتھ اندر یوان۔ پوٚتس کۅسہ شکل کٔر امۍ اختیار۔ امکۍ اصطلاح تہ علامات کیا چھہِ، یہ ویژھناونچ چھیہ اوہ مۅکھہ ضرورت یُتھ تم لوکھ یمن نہ تصوفچ کینہہ یا صحیح خبر چھیہ، ہیکن توتہِ کم زیادہ امچ زان پیدہ کٔرتھ تہ تمہِ زانۍ سیتۍ مسلمان صوفی شاعرن ہندِ کلامک روح سمجتھ۔"

امین کامل "صوفی شاعر"، جلد اکھ، جموں و کشمیر اکیڈمی آف آرٹس، کلچر اینڈ لینگویجز سری نگر، 1964، صفحہ 6

.