January 2012| جنوری 2012
 

 

پرنٹ ایڈیشن نیب شمارہ 24


نیہہ دو: وزن چھا شاعری ہندِ خاطرہ ضروری کنہ نہ؟

وزن چھا شاعری ہندِ خاطرہ ضروری کنہ نہ؟ وزنہ نش چھہ مراد کانہہ تہِ وزن یس مختلف شعری روایژن منز مروج چھہ یا اوس، چاہے سہ پتہ ہیجلۍ وزن چھہ یا تاکیدی وزن یا سنسکرت تہ عربی شعری روایژن ہند پیچیدہ ماترا وزن۔

ییلہ جدید نقادو شاعری ہندۍ اہم عنصر نٔوس شعری ماحولس تہ تنقیدی تناظرس منز بدِ کڈنۍ ہیتۍ یعنی تم عنصر یمو ستۍ شعر شعر بنان چھہ، تمو وُچھ زِ وزن اوس نہ امہِ رنگۍ کانہہ خاص کارنامہ انجام دوان۔ لہذا دوٚپ تمو منزہ اکثرو زِ وزن چھہ غیر ضروری۔ مگر واریاہن ادبی حلقن منز آو وزن شعری ہیژ ہندِ تمہِ سوٚتھرِ کٮن عنصرن منزگنزراونہ یمن منز استعارہ، تشبیہہ، علامت، رمز، کنایہ، بیترِ چھہِ۔حالانکہ وزن چھہ شعری ہیژ ہنزِ تنظیمہِ تہ ترتیبہِ ہندٮن تمن عنصرن ستۍ تعلق تھاوان یمن منز مصرعہ بندی، بند یعنی شعری ہیژ اندر اندروزنچ اکایی یا ہیتی اکایی، مصرعہ ژھٮن، قافیہ چاہے اند قافیہ یا منز قافیہ، ردیف یا ووج، بیترِشامل چھہِ۔اکثر چھہِ اسۍ وزنکۍ پاٹھۍ شاعری ہندِ باپتھ قافیہ ردیف تہِ غیر ضروری مانان یہ مٔشرتھ زِ قافیہ ردیف تہِ چھہِ ہیژ ہندِ تنظیمی سوٚتھرِچہ ضرورژ۔ لہذا یہ ؤنتھ زِ یم چھہِ نہ شاعری ہندِ خاطرہ ضروری چھہِ اسۍ دراصل شاعری ہندِ خاطرہ ہیت غیر ضروری قرار دوان۔مگر اسہِ پزِ یہ فرق ذہنس منز تھاونۍ زِ غیرضروری گوٚو نہ مطلب غیر مناسب یا بے محل یا غیر متعلق۔ سانۍ سٲرے روایتی یا کلاسیکل شاعری چھٮہ ہیژ ہنز شاعری۔ ہیژ ہیکو شاعری ہندِ خاطرہ غیر ضروری ؤنتھ مگر غیر متعلق ہیکوس نہ ؤنتھ۔یہ فرق چھٮہ سٮٹھا اہم ۔ شعری ہیت غیر ضروری قرار دنہ خاطرہ آیہ معقول دلیلہ پیش کرنہ مثلا یہ زِ عصری وجود تہ تجربک اظہار چھہ نہ روایتی ہیژن منز ممکن تہ ییلہ شاعری منز ہیت دوبارہ ورتاونہ آیہ خاص کر پوسٹ ماڈرن شاعرن ہندِ دسۍ یمو روایتی ہیژن ہنز تجدید کٔر تمو تہِ کرِ معقول دلیلہ پیش۔

یہ چھٮہ حقیقت زِ جدیدیت آیہ شاعری منز اکھ زبردست انقلابی تبدیلی ہٮتھ۔ اتھ تبدیلی پیوٚو بلینک ورس؍فری ورس ناو۔ سانٮن زبانن منزآزاد نظم۔ یہ چھہ جدید دورک اکھ زبردست دیت۔ یہ تبدیلی ٲس روایتی ہیژن نش ژلنچ اکھ وتھ۔شاعر ٲسۍ یمو روایتی بندشو نش آزاد گژھتھ شعری تجربن ہند اظہار کرُن یژھان۔ تکیازِ یمن ہیژن ستۍ ٲسۍ شاعری ہندۍباقی عنصر تہِ مقرر گمتۍ مثلا ڈکشن، استعارہ، تشبیہہ، بیترِیمو منزہ نٮبر نیرنہ خاطرہ ہیت ترٲوتھ ژھننچ ضرورت پییہِ۔ مگر امہِ آزادی باوجود رود وزن مکمل یا جزوی طور آزاد نظمہِ ستۍ چالو۔ یوٚت تام نثری نظمہِ اتھ تہِ بالکل دکہ دیت۔ آزاد نظمہِ پکنوو وزن امہِ مۅکھہ پانس ستۍ تکیازِ یہ رود ہیتی تنظیمہِ ہنزِ غیر موجودگی منز نظمہِ اکہِ ممکن انتشارہ نش بچاوان۔آزاد نظمہِ منز یتھ آہنگس اہمیت میج یُس عام بول چالک آہنگ اوس یا شاعر سند ذاتی آہنگ اوس، سہ اوس بہر حال زبانۍ ہندس پننس آہنگس پٮٹھ دٔرتھ۔ امہِ کنۍ تہِ رود وزن پننہِ آزاد شکلہِ منز نظمہِ منز جاری۔ مگر وزنکہِ رسمی یا قاعدہ بند ورتاوہ نش کھتۍ شاعر آزاد نظمہِ منز بوٚٹھ۔روایتی ہیژن منز چھہ وزن باقی عنصرن ستۍ رٔلتھ نہ صرف لفظن ہندِ تعلقہ بلکہ شعری تجربہ چہ عملہ منزتہِ سۅ کٲم انجام دوان یۅس کٲم مۅختہ مالہِ منزپن دوان چھہ یعنی وزن چھہ اکس ہیژ منز ورتاونہ ینہ واجنہِ زبانۍ تہ تتھ پتہ کنہِ کس تجربس ترتیب تہ تنظیم دِتھ تہ پانہ وانۍ میُل کٔرتھ مضبوط بناوان۔ یۅہے منطق تہِ رود وزنہ کہ تعلقہ آزاد نظمہِ منز جاری۔ یعنی جدید شاعرس اوس اکہِ طرفہ روایتی ہیژو منزہ نٮبر نیرنک شوق تہ دوٚیمہِ طرفہ اکہِ نامعلوم انتشارہ کہ امکانک خوف یمہِ کنۍ تمۍ وزن مۅچھہ منز چیرہ رٔٹتھ تھوو۔

نثری نظم ہیچ نہ سانہِ شعری روایژ منز زیادہ برونہہ پٔکتھ۔ برسرآوردہ نظم نگار رحمن راہی تہِ چھہ تازہ ترین کتابہِ منز پننہِ نظمیہ شاعری ہندِ تعلقہ ونان:

’’وزن چھہ مقداری تہِ ورتاونہ آمت تہ غیر مقدرای تہِ ۔۔۔تہ روایتی عروضہ نش چھہ انحراف تہِ سپدمت، تاہم چھہ نہ کانہہ تہِ نظم خالص نثری۔‘‘

امہِ بیانہ تلہ چھہ باسان زِ یہ شاعرچھہ نہ نثری نظمہِ ہند قایل بلکہ چھہ کانہہ نتہ کانہہ وزن پننٮن نظمن منز ورتاوُن ضروری زانان یہ اعلان کٔرتھ تہِ زِ ’’شعرہ باوژ باپتھ یتھہ پاٹھۍ نہ ردیف تہ قافیہ لازمی ماننہ آمت چھہ تتھے پاٹھۍ چھہ نہ وزن تہِ امہِ چہ مولہ ماہیژ منز شامل گنزرنہ یوان۔‘‘گویا یہ شاعر چھہ وزنس شاعری ہنزِ مولہ ماہیژ منز شامل نہ گنزرتھ تہِ پانس ستۍ ستۍ پکناوان۔ حالانکہ آزاد نظمہِ ہندِ خاطرہ چھہ نہ وزن ضروری بلکہ چھٮہ یہ نظم یمو روایتی بندشو نش آزادی حاصل کرنہ کہ غرضے وجودس منز آمژ۔ راہی چھہ نہ یہ وننہ خاطرہ تیار مگر بہ ونہ تمۍ سندِ طرفہ زِ اکثر نظمن منز ماترا تہ ہیجلۍ وزن ورتاونہ باوجود چھہ تسند اکھ کارنامہ یہ زِ تمۍ کٔر کاشرِ نظمہِ شاعر سندس ذاتی آہنگس ستۍ زان تہ خالص نثری آہنگس پٮٹھ تہِ لیچھن نظمہ مثلا ’اکھ شبییہ‘۔ اتھ نظمہِ منز چھہ نہ کانہہ مقداری، غیر مقداری، تاکیدی یا ہیجلۍ وزن متواتر یا جزوی طور تہِ ورتاونہ آمت۔ یہ نظم چھٮہ صرف نثری آہنگ ورتاوان۔ وچھو امیک اکھ اقتباس:

زُوس جسمس ٲسس برژھہ بۅچھہ/ کھونکھن نوٚمرتھ اوس میژِ آبس کنٮن کنڈٮن مشک ہٮوان/ لوٚٹ اوسس ڈلہ ونس ہوہس مزازہ وچھان

یتھے پاٹھۍ چھٮہ باقی نظمہ مثلا ’مٮہ نے زٮو آسہِ ہے دزمژ‘۔ امیک تہِ اکھ اقتباس:

سونچ کرہ ہا تہ ہیگلس دٔزم تال/ قدم تلہ ہا تہ مارکسس پھٹِم پدۍ/ دپہ ہا مول تہ دوٚپہم غاصب/ ژھارہن موج تہ کٔرہم رسوا رچھہن لولٔر تہ یم نم تہ دند کتہِ تھاوکھ/ کٕنہ ہا دود تہ ہٮنہ والٮن اچھ لجمژ تالو/ نے کس کرِ وۅنۍ گراو/ نیستانے ییلہ اندہ وند دوٚد؟

راہی سندِ پٮٹھمہِ بیانہ باوجود چھہ یمن نظمن منز نثری آہنگ۔ نادم ہیوٚک نہ ہیتی تجربو تہ تنوع باوجود یہ نثری آہنگ پیدہ کٔرتھ۔ تمۍ سنز اکے نظم ’باراں کوٹ‘ چھٮہ اتھ کُن اکھ کوشش ۔ وچھو امیک آغاز:

کمرس منز ژاس/ تہ باراں کوٹ کوٚڈم نالہ/ اویزان ترووم کوٹہ کِلس پٮٹھ/ ہنگہ منگہ پھیورس پوٚت/ تہ یڈ بٔرتھ نظرا کٔرمس/ باسیوم زن چھُس بے/ اتھ کوٹہ کِلس پٮٹھ اویزان گومت

مگر نظمہِ منز چھٮہ برونہہ کُن اتھ نثری آہنگس منزوزنچ روانی ننۍ نیران یتھ متقاربس یا ہیجلۍ وزنس ستۍ واٹھ دِتھ ہیکو۔ کامل چھہ نظمن منز وزن تہِ ورتاوان تہ نثری آہنگ تہِ۔ سہ چھہ نظمن منزوزنہ باوجود نثری آہنگ خۅد کلامی یاکتھ باتھہِ ہند انداز تہ ڈرامایت ورتٲوتھ تہِ پیدہ کران۔ مثلا وچھو ’بے وکھ‘ نظمہِ ہند آغاز:

زٔر تہ کٔج خاموش راتھ/ ٹھس ٹھس ٹھس/ کتھ نہ باتھ/ ترٮن برنزٮن ہند بے صبر اکھ انتظار/ ییژ مستی؟/ تڑ۔ تڑاخ کُس سا چھو/ سے یمس یوٚدوے ژٮتس آسی زمانا اکھ سپد/ ناد بوزتھ واد ہیو اندری کریوتھ

کامل سنزہ لۅکچہ نظمہ چھٮہ خاص طور خالص نثری آہنگ ورتاوان۔ وچھو ’اُنظرُ ترانی‘ نظمہِ ہند آغاز:

وُنندرۍ؍ساسہ نوومت زونہ گاش/ ملرہ موٚت؍ تھکتھ ژھینتھ پیومت سوٚدر/ زنماتن ہندس؍تتھ شینہ پرنس تہ شہلۍ شہجارۍ/ زُوِس تاں؍کیا سنا وٲتتھ ہٮکا؍ سریہِ پروِ برونہہ

یہ نثری آہنگ ورتوو باقی شاعرو تہِ پننہِ نظمہِ منزگاہے وزنہ سان تہ گاہے وزنہ ورٲے ۔ زیادہ مثالہ چھٮہ نہ برونہہ کنہِ۔ تاہم وچھوکھ بنم اقتباس یم وزنہ بدلہ خالص نثری آہنگس پٮٹھ دٔرتھ چھہِ:

[پٔرو باقی پرنٹ ایڈیشنس منز]

۔۔ منیب الرحمن


_______________________

مشمولات: