January 2012| جنوری 2012
 

 

پرنٹ ایڈیشن نیب شمارہ 25


نیہہ دو

منظومہ کِنہ غزل؟ ہزج کِنہ رمل؟

کھٹتھ سینس اندر بو نالہ رٹتھ شامہ سۅندر/ چو جامہ سروِ نازس پان ولٲیو مدٲنو

رسول میرنہِ یمہِ غزلک یہ محرف شعر چھہ، تتھ متعلق چھہ رحمن راہی پننہِ کتابہِ ’’شعر شناسی‘‘ منز ونان:

)الف)یہ غزل نما منظومہ چھہ کینژو کتھو کنۍ خاص توجہس لایق۔ گۅڈنٮتھے وزنہ کہ لحاظہ تکیازِ اتھ منز ورتاونہ آمت وزن چھہ ازۍچہ عام کاشرِ شاعری ہندیو وزنو نشہِ مختلف۔

)بے)منظومہ چھہ گۅڈنچی نظرِ صورژ کنۍ غزل باسان۔ تہِ زن گوٚو اتھ چھہ قافیہ ردیف بالکل تمی چالہِ یمہِ چالہِ مثالے کنہِ فارسی یا اردو غزلس آسہِ۔ مگر تہِ ٲستھ تہِ چھہ امیک وزن غیر مروج تہ غیر معمولی۔ حالانکہ ہاونہ باپتھ ہرگاہ ہاون پییہِ تیلہ ہٮکون یہ بحر، بحر ہزج مثمن محذوف مٲنتھ تہ زحاف نظرانداز کٔرتھ۲؂ ہٮکوکھ امکۍ مولہ رکن یتھہ پاٹھۍ بیان کٔرتھ: مفاعیلن مفاعیلن مفاعیلن فعولن

)ج) غزلہ کہ رسومہ مطابق یوٚدوے پرٮتھ اکہ شعرک معنہِ پننہ پننہ جایہ مکمل تہ خۅدمختار چھہ، پوٚز تہِ ٲستھ تہِ چھہ پورہ منظومک موضوع کلہم کٔرتھ کنے باسان یعنی دورٮر ۔

)د) پٮٹھہ چھٮہ کلاسیکل غزلہ چہ روایژ خلاف اتھ منز زنانہ عاشق تہ مرد چھہ معشوق۔یہ زن کاشرِ لولہ شاعری ہنز پرانۍ روایت چھٮہ روزمژ۔ راہی چھہ اتھ بٲتس’’غزل نما منظومہ‘‘ ونان۔ یعنی سہ چھہ نہ اتھ پورہ پاٹھۍ غزل ماننس تیار۔ صرف چھس صورژ کنۍ یہ غزل باسان تکیازِ اتھ منز چھہ فارسی اردو غزلہ چہ چالہِ قافیہ تہ ردیف ورتاونہ آمت۔ دوٚیمہِ اندہ چھہِ تس اتھ منز غیرمروج وزن تہ کلاسیکل روایتس خلاف زنانہ عاشق نظرِ گژھان تہ موضوع کلہم کٔرتھ کنے باسان۔

حقیقت چھٮہ یہ زِ رسول میرن یہ غزل چھہ نہ کنہِ روایتی کاشرِشعرہ ذٲژ ہنز نمایندگی کران۔ یعنی یہ چھہ نہ واکھ تہ یہ چھہ نہ وژن تہِ۔ یمے زہ مقامی شعرہ ذٲژ چھٮہ غلبہ پاٹھۍ روایتی کاشرِ شاعری منز ورتاونہ آمژہ۔پابند نظم ٲس نہ رسول میرنہِ وقتہ لیکھنہ یوان۔ اگر یہ بٲتھ ہیتی طورواکھ چھہ نہ، وژن چھہ نہ، غزل چھہ نہ ، پتھ کیا چھہ یہ؟ راہی سند (بٲتہ بدلہ گوٚب پہن شبد ورتاونہ کہ شوقہ) فارسی نش مستعار لفظ ’’منظومہ‘‘ ما چھہ کانہہ شعرہ فارم۔وارہ کارہ چھہِ اتھ منز مطلع ،مقطع، دۅن مصرعن ہندۍ شعر یمن قافیہ تہ ردیف چھہِ تہ یم خۅدمختار چھہِ۔ یمے چھہِ غزلہ چہ پرزنژ ہندۍ روایتی ہیتی نشانہ۔ آوازِ رنگۍ یۅس فرق اتھ تہ کلاسیکلغزلس منز نظرِ گژھان چھٮہ (یعنی زنانہ عاشق)، صرف تمہِ اکہ وجہہ کنۍ ما کرو امہِ کس غزل آسنسے انکار یا شک۔ بییہ چھہ نہ یہ ضروری زِ غزل کیا گژھہِ الگ تھلگ پاٹھۍ مردہ سنز آواز آسُن۔ سہ چھہ نہ غزلہ کہ تعریفک کانہہ بوٚڈ شرط۔ غزلہ کس امہِ قسمہ کس تعریفس پتہ کنہِ چھہ شاید یہ معمولی خیال زِ ’غزل کے معنی ہیں عورتوں سے باتیں کرنا۔‘

فارسی تہ اردو زبانن منز چھٮہ کینہہ زنانہ شاعر وژھمژہ، تمن ہندۍ معشوق ما آسہ زنانہ؟ بنم فارسی غزل چھہ اکس مشہور ایرانۍ شاعر قرۃ العین سند ووٚنمت (یسند ذکر علامہ اقبال تہِ چھہ کران)۔ امۍ سندٮن غزلن منز ما کرون زنانہ معشوق تصور۔ لازما چھہ تسند معشوق مرد۔ رسول میرنی پاٹھۍ"زنانہ عاشق تہ مرد معشوق"

[پٔرو باقی پرنٹ ایڈیشنس منز]

۔۔ منیب الرحمن


_______________________

مشمولات: