January 2012| جنوری 2012
 

وزن تہ آہنگ


منیب الرحمن، باسٹن، یو ایس

 

"سانۍ کن تہ ذہن ییلہ تم خالص کاشرۍ آسن، چھہِ نہ یمن وزنن ہندس آہنگس پورہ پورہ ساتھ ہٮکان دتھ۔" (کامل، سون ادب ۶۷۹۱، ص ۰۱۱)

وزن تہ آہنگ کہ تعلقہ چھہ امین کامل اتھ اقتباسس منز اکس اہم کتھہِ کُن حٮس دوان۔ سہ چھہ یمن منز فرق کٔرتھ آہنگس وزنچ بنیاد مانان۔ شاعری منز چھٮہ اتھۍ آہنگس اہمیت۔ عروضی بحث سمجنہ خاطرہ چھہ ضروری زِ وزن تہ آہنگس درمیان یۅس فرق تہ یس رشتہ چھہ تمن پٮٹھ ییہ غور کرنہ۔

آہنگس چھہِ کن تہ ذہن فوری تہ آسانی سان ژینتھ ہٮکان، مگر امیک تعریف کرُن چھہ مشکل۔ تاہم ہٮکو اسۍ ؤنتھ زِ آہنگ چھہ زبانۍ ہندٮن مخصوص عناصرن خاص کر آوازن ہندِ باقاعدہ تہ یکسان تکرارہ ستۍ پیدہ گژھان یُس شاعری منز اکھ خاص اہمیت تھاوان چھہ۔ آہنگ ہیکہِ نثرس منز تہِ ٲستھ مگر سہ بدِ کڈُن چھہ مشکل تکیازِ نثرہ چہ آہنگ چہ اکٲییہ یا امکۍ نمونہ آسن لازما زیٹھۍ تہ حدہ کھۅتہ زیادہ متنوع۔ نثرس مقابلہ چھہ شاعری ہند آہنگ ٹاکارہ پاٹھۍ یکسان آسان، آسانی سان ژیننہ یوان تہ اکثر شعوری طور طریقو پیدہ کرنہ یوان۔ مثلا

ارۍ نہ رنگ گوم شراون ہییے

کر ییے درشن دییے

اتھ شعرس منز چھٮہ گۅڈنی ؍ہییے، ییے تہ دییے؍ لفظن ہنز یکسانیت تہ تکرار قابل توجہ۔ امہِ علاوہ چھہ/ر/ تہ /ن/ آوازن ہند تہِ تکرار میلان۔ /شراون/ تہ /درشن/ لفظن ہنز صوتی یکسانیت تہ نشست تہِ چھہِ قابل غور۔ یتھے پاٹھۍ رنگ تہ گوم لفظن منز /گ/ آوازِ تہ درشن تہ دییے لفظن منز /د/ آوازِ ہند تکرار۔ یمو تمام لسانی تہ صوتی عناصرو ستۍ چھہ اتھ شعرس اندر آہنگ نوٚن نیران۔ گویا شعرہ کہ منظم وزنہ الگ یاعلاوہ تہِ ہیکہِ یکسان لفظن تہ آوازن ہندِ تکرارہ ستۍ آہنگ پیدہ گژھتھ۔ منظم وزن بارسس ینہ برونہہ یۅس شاعری قدیم زمانس منز مختلف قومن منز سپدانٲس، تتھ منز اوس آہنگ زبانۍ ہندیو یتھوے عناصرو ستۍ پیدہ کرنہ یوان۔ تتھ شاعری منز اوس آہنگ پیدہ کرنک اصول ہشن آوازن تہ نحوی ساختن ہندس تکرارس پٮٹھ دٔرتھ۔ یہ گژھہِ یاد تھاون زِ پرانہِ زبانہ آسہ زیادہ تر گردان تہ تصریف واجنہِ زبانہ شاید یمہ کنۍ آہنگ پیدہ کرنک یہ ساختیاتی طریقہ کارگر اوس۔

ییلہ لفظ تہ لفظہ کٮن لۅکٹٮن حصن آہنگ کہ لحاظہ اہمیت ہیژن میلنۍ، آہنگ پیدہ کرنکۍ کم یا زیادہ منظم، پیچیدہ تہ نازک طریقہ آیہ وجودس۔ یم طریقہ ٲسۍ لازما قاعدہ بند تہ یمنے طریقن چھہِ اسۍ عام طور وزن ونان۔ وزن چھہ نہ آہنگک مترادف بلکہ شعری آہنگ ترتیب دنک، دریافت یا پیدہ کرنک اکھ منظم طریقہ۔ وزنن ہند ارتقا سپد شعری ہیژن ہندس ارتقاہس لرِلوٚر۔ یعنی ییژ ییژ شعری ہیت منظم سپز تیوت تیوت سپد شعری آہنگ تہِ منظم۔ قدیم شاعری ہندۍ پاٹھۍ چھٮہ نہ پتمہِ صدی ہنز نثری نظم تہِ آہنگ پیدہ کرنک منظم تہ پیچیدہ طریقہ ورتاوان۔ اتھ منز چھہ زیادہ تر لفظن تہ فقرن ہند تکرار میلان یمہِ ستۍ آہنگ پیدہ چھہ گژھان۔ لہذا چھہ نثری نظمہِ ہند تکرار تہِ زیادہ تر ساختیاتی۔

نثری نظمہِ منز چھیہ جدید دورس منز زبانۍ ہند پنن ہیجلۍ یا تاکیدی آہنگ تہ اکہ خاص طرز ادا سیتۍ پیدہ گژھن وول یا شہہ چہ مخصوص کھس وسہِ سیتۍ تہِ پیدہ گژھن وول آہنگ تہِ ورتاونہ چہ کوششہ سپزمژہ۔

قدیم شاعری تہ نثری نظمہِ منزباگ تہ لرِ لوٚر چھہ دنیاہ چہ تمام معیاری شاعری منز آہنگ پیدہ کرنک اکھ نتہ بیاکھ، کم یا زیادہ منظم تہ قاعدہ بند طریقہ ورتاونہ آمت۔ یعنی وزن۔

آہنگس تہ وزنس منز چھٮہ نہ اکثر پاٹھۍ فرق کرنہ یوان شاید امہ کنۍ زِ آہنگک بیان کرن چھہ نہ آسان تہ امیک بیان چھہ وزنہ چیو معروضی اکاییو ستی ممکن سپدان۔ وزن چھہ شعرک آہنگ ترتیب دنک یا بیان کرنک طریقہ یُس تصوری طور شاعری ہندِ خاطرہ شاید ضروری چھہ نہ مگر شاعری ہنزن مخصوص ہیتی ترتیبن یعنی اصنافن ہندِ ہیتی تنظیمک لازم تہ ملزوم حصہ چھہ۔ یُتھے اسۍ ہیتی تنظیمن یا اصنافن نٮبر نیران چھہِ، وزنچ اہمیت چھٮہ کم گژھان تہ امچ جاے چھہ سہ آہنگ رٹان یتھ وزنہ چہ تنظیمہِ ورٲے غیر واضح تہ مبہم آسنہ کنۍ لازما زبانۍ ہندٮن ساختیاتی تہ صوتی عنصرن ہند سہارہ ہیوٚن پٮوان چھہ۔

نثری نظم کٲژا کامیاب روز، سہ چھہ الگ بحث۔

شاعری ہنز ہیتی اکایی ییژاہ لۅکٹ آسہِ، تیوتاہ چھہ تمیک آہنگ متاثر کران۔ سہ آہنگ قایم کرنہ خاطرہ چھہ نسبتا منظم وزن ورتاونک ضرورت پٮوان۔ یعنی غزلہ کہ شعرک آہنگ چھہ تمہِ کہ تاثرک اکھ اہم عنصر تہ سٮٹھا لۅکٕٹ ہیتی اکایی آسنہ کنۍ چھہِ نہ اتھ منز وزنہ رنگۍ زیادہ یلہ گی تہ تنوع ممکن۔ نظم یۅس امہِ کھۅتہ بٔڈ اکایی چھٮہ ہیکہ کافی یلہ گی تہ تنوع ورتٲوتھ۔ تمیک آہنگ چھہ نہ تیوتا فوری یوتاہ مثلا غزلہ کہ شعرک چھہ۔اس لیے ییژاہ بٔڈ ہیتی اکایی تیوتاہ چھہِ وزنس منز یلہ گی تہ تنوع ممکن۔ نثر چھٮہ امچ مثال۔