June 2012|جون 2012
 
   

کامل نٮن ترٮن شعرن ہند اکتشافی تجزیہ


حامدی کاشمیری

 


صنف غزل یا امہ کس کُنہِ تہِ شعرس تنقیدی سام ہٮنک یُس روایتی طریقہ رودمت چھہ، سہ چھہ یۅہے زِ یا تہ امیک لفظہ معنی یا امیک کلہم معنی، خیال، مقصد یا موضوع ییہ بدِ کڈنہ۔ غزلہ سے یوت نہ بلکہ بیین اصنافن مثلا نظمہِ تہِ چھیہ یہے ادرہ کھل کرنہ آمژ۔امہ طریقہ نہ چھہ شعری متنک تخلیقی انہارے پرزناونہ آمت نہ چھیہ امچ کیفیتی درجہ بندی ممکن سپزمژ۔ وقتس سٍتۍ سٍتۍ چھیہ زندگی، سماجس تہ ادبس منز تبدیلیہ یوان روزان روزمژہ۔ ازۍکس تیز رفتار زمانس چھیہ تبدیلین ہنز رفتار تہِ بڈیمژ۔ ادبی تنقید تہِ رود کینہہ بنیادی تبدیلیہ قبول کران۔پرانۍ تنقیدی طریقہ تہ نظریہ چھہِ ٲخری شہہ ہٮوان۔ وۅنۍ چھہ یوان وچھنہ زِ شاعرانہ متنک لسانی نظام کیا چھہ، کیا کران چھہ، لفظن ہند ورتاو چھا ترسیلی کنہ تخلیقی نوعیتک؟ تنقیدک یہ طریقہ چھہ نہ شعرس پٮٹھ زورہ پشراونہ یوان بلکہ چھہ تخلیقی شاعری منزے بدِ کڈنہ یوان۔ کاشرِ زبانۍ منز چھہِ اولےژۅداہمہ صدی منزے للہ واکھ تہ شیخہ شرکۍ زبانۍ ہندِ تخلیقی ورتاوچ تہ تمہِ سٍتۍ اسراری تہ فرضی دنیا آسنک باس دوان۔ تمہِ پتہ آیہ حبہ خوتون، محمود گامی بیترِ خاص کٔرتھ صوفیانہ شاعری تخلیقک حق ادا کران تہ بییہ آگہی پرزلے زِ شعر چھہ لفظو تہ لفظن ہندِ ارتباطہ تہ تقاضہ سٍتۍ زاین لبان تہ معجزاتی طور اطرافن کن واش کڈان تہ اکھ ازانۍ تہ باگہِ بوٚرت تہ سرساوۍ تجربہ بنان۔ یہ تجربہ تہ امکۍ ممکنہ جات چھہِ لفظن، ترکیبن، استعارن تہ رمزن منز وٲتتھ آسان۔ پتہ چھہ اکھ ڈرامایی صورت حال فرضی متکلم، مخاطب، مخالف، مکالمہ، واقعہ تہ فضا ستٍۍ ونہِ یوان۔

یہ چھیہ سٮٹھا اطمنانچ کتھ زِ بزرگ شاعر امین کامل نہِ شاعری خاص کٔرتھ غزلہ شاعری منز چھہ تخلیقک رح رکانہ لفظن ژھایہ ژھایہ درینٹھۍ گژھان۔ میہ چھہ خیال زِ انگریزۍ زبان ٲسۍ تن یا اردو زبان یا کاشر زبان، ازکلچ شاعری چھیہ نہ تخلیقی تقاضہ پورہ کران۔ یہ چھیہ کلہم پاٹھۍ برونٹھے سونچمت خیال، contents (موضوع)، ردیف، قافیہ تہ وزنس منز ویپراوان تہ منظوم کلامکۍ (versification) امبار کھالان۔یہ چھیہ ٹاسر، مقصدی، جدبند، تکراری تہ روایتی۔ اتھ پوٚت منظرس منز تراوو اسۍ کامل صٲبنہ اکہ غزلہِ ہندٮن ترٮن شعرن ہندس تخلیقی تجربس پٮٹھ نظر۔ شعر چھہِ یم:

چانٮن زلفن ہند گوٚن سایہ
یتھ صحراوس میانی مایہ
شعرس منز چھہ متکلم اکس زیٹھس سفرس پٮٹھ درامت۔ 'یتھ صحراوس' سٍتۍ چھہ ننان صحراو پتے چھہِ صحراو طے کرنۍ۔ سہ چھہ اکس دزونس صحراوس منز پکان پکان معا محسوس کران زِ معجزاتی طور چھیہ تس برونٹھہ کنہِ تمۍ سنز معشوق مس یلہ ترٲوتھ تس نکھہ یوان تہ تمۍ سندِ مستک 'گوٚن سایہ' چھہ تمس ولنہ یوان۔ معشوق سند یتھ ملاپ چھہ متکلمس یہ محسوس کرناوان زِ یہ سورے چھہ تمۍ سندِ لولک نتیجہ۔ متکلم سندِ تخاطبک لہجہ تہ خۅد کلامی سٍتۍ چھہ تمۍ سندِ لولک سٮزر تہ پزر تہ پایداری ننۍ نیران۔ صحراوہ بزۍ گژھنہ باوجود چھہ تمس یقین زِ معشوق سند یُن چھہ تمۍ سندی لولک نتیجہ۔ امہِ کنۍ چھہ شعرس منز اکھ کثیرالجہت تخیلی واقعہ برونہہ کُن یوان، یُس حیرت، خۅش فہمی، disillusionment، مطابق، تضاد، خۅدکلامی، بدلونہِ لہجہ تہ حد بندی ہنز نفی کرنہ سٍتۍ چھہ بسیار پاسل معنوی امکانات وۅتلاوان:

واون کوٚر شمعہس بلۍ گیند
نبہ کٮن ژانگٮن وژھ تھتھرایہ
یتھ شعرس منز چھہ اکھ فرضی متکلم اکھ وٮکھت، حیران کروُن تہ رنبہ وُن منظر نامہ وۅتلاوان۔ سہ چھہ کُنے زوٚن کٹھس منز شمعہس کن وچھان۔ انہ گٹس منز چھہ کُنے شمع دزان۔ شمعہس کُن مدعے گنڈتھ وچھُن چھہ تمۍ سنزِ سایکی ہند اکھ مظہر۔ سہ چھہ امس نشہ قریب۔ دزوُن شمع چھہ تس جذباتی تہ روحانی طور زندہ روزنک سبب۔ اتھۍ منز آو واوہ دکہ۔ یہ اوس شمعہس ژھیوراونہِ آمت۔ اماپوٚز متکلم چھہ ونان زِ واو آو نہ شمع ژھیوراونہِ بلکہ آو سہ شمعہس گیند کرنہِ۔ پیٹھۍ کنۍ ؤژھ نبس منز دزوُنٮن ژانگٮن( تارکن) تھتھراے زِ بچارس شمعہس ادہ یژے گاشہ ہن چھس تہ تژے، گوٚژھ نہ تمہِ نش محروم گژھن۔ متکلم سند یہ ونُن زِ واو اوس نہ شمعہس ژھیوراونہِ آمت تہ سٍتی نبہ کٮن ژانگٮن تھر تھر ؤتھتھ چھہ اکھ متضاد صورت حال وۅپدان۔ یتھہ کنۍ چھہ شعر حیرت، وۅمید، خوف، خۅش فہمی تہ کایناتی ہم آہنگی ہندۍمعنوی جہات عطا کران۔

اچھرن ہند زربف نایاب
نٮتھہ ننۍ معنی گامتۍ ضایع
یہ شعر چھہ اکھ فرضی تہ تجسسس آمیز واقعہ وۅتلاوان۔ شعرک کردار چھہ تخلیق کار یُس معروضی حقیقت تہ امکۍ مختلف جہات لفظن منز وۅتلاونہ خاطرہ لفظن ہندِ المناک صورت حالک مقابلہ کران چھہ۔ یہ چھہ لفظن تہ موضوعک تضاد تہ کشمکش۔ متکلم چھہ ژینان تہ وچھان زِ لفظن ہندِ خاطرہ مطلوبہ 'حروف' لباس چھہ نایاب۔ سہ چھہ بییہ معنہ یا موضوع 'نٮتھہ ننۍ گامتۍ ضایع' رنگۍ وچھان۔ شعرک یہ فرضی واقعہ چھہ حقیقی تخلیق کار سندِ خاطرہ حقیقی زندگی منز تہِ پیش یوان۔ تکیازِ لفظ چھہِ پیہم ورتاوہ سٍتۍ گسہ آمتۍ آسان تہ واتنیارک، ژھررک باس دوان۔ دوٚیم کتھ چھیہ یہ زِ الیکٹرانک تہ ٹیکنالوجی ہندس زمانس منز چھہ شاعرانہ زبان تہ تخلیقی واتنیارک تضاد نوٚن نیران۔ زیر تجزیہ شعرکۍ جہات بدِ کڈان، مرکزی کردار سندِ ارتقا سٍتۍ چھہ ننان زِ وسعت چہ تبدیلیہ چھیہ رومانی زمانہ مۅکلیمژہ۔ یہ المیہ برونٹھ کُن اننہ سٍتۍ چھہ شعر راونس سٍتی یاب گژھنہ کس امکانس کُن تہِ اشارہ کران تہ شعر چھہ تہدار بنان۔