Kashmiri Short Story|کاشر افسانہ
 
   

کۅکر جنگ


امین کامل

 


یُتھے غلام خان کۅکر ہٮتھ آنگنس منز ژاو، شاہہ مال گٔے تھوٚد وتھتھ۔ تس رود نہ پھٮرنس لونٹ ہٮنک تہِ ہوش، یُس ٲٹھہ مٲسۍ شرۍ بوٚرمت اوسس۔ تمہِ زن لوٚب کیاہ تام لاس، تتھے کنہِ ؤژھ خانہ دارس کُن۔
’اوٚنتھہ؟ میہ دوٚپ از تہِ ما آکھ ژھوٚرے۔‘ تمہِ نیو یہِ دپۍ زِ تہِ کۅکر أمس اتھہ منز تھپھ دتھ تہ تاجس تہ تیرٮن لٔجس اتھہ ڈالنہِ۔
’ساڈن ژۅن ڈبلن چھُے۔‘ غلام خانن تروو ’ڈبلن‘ لفظس پٮٹھ زور۔ شاید یہِ وننہ مۅکھہ زِ یُتھ نہ دپکھ لیٚوژ لوٚنگ ما چُھ۔ تہِ چُھ پور ساڈن ژۅن ڈبلن۔ مگر شاہہ مالہِ زن نہ اتھ ستٍۍ کانہہ تہِ غرض مطبل اوس۔ سۅ ٲس چھرا کۅکرس وچھان تہ ؤچھۍ ؤچھۍ أندرۍ شاد مرگ گژھان۔ تمہِ تروو کۅکر پتھر تہ ہمسایہ مکانچہ دارِ کُن نظر تُلتھ دِتُن بُمن درسہ۔ امہِ پتہ ؤژھ بیٚیہِ خاندارس کُن، مگر برونٹھمہِ کھۅتہ ہنا تھدِ پہن۔
’یِتھُے کۅکر کیاہ ٲسس بہ تہِ ژھاران۔ نتے راتس دۅہس کتٍۍ ژھۅٹہ کۅکر کننۍ ٲسۍ پھیران۔ یہِ کیاہ ، محلکۍ محلن ہے ہیٚتۍ متۍ چھہِ۔‘
غلام خانن ووٚنس نہ اتھ کانہہ تہِ جواب تہ سُہ ژاو سیٚودے اندر۔ کۅکرس اوس زنگن سُتلہِ ٹکرا ڈنگ دتھ تہ سُہ اوس بڈ جستہ خٲزی کٔرتھ پکنچ کوشش کران۔ سُہ اوس منزۍ اتھ ڈنگس دِگہ دوان تہ منزۍ أندۍ پکھس سام ہیو ہٮوان۔
شاہہ مالہِ آسہ کۅکرِ تار تہِ رچھہِ مژ۔ تمہِ آسہ امہِ وِزِ، آنگنس منز ژھۅٹہ پھلۍ ژھاران۔ تمن یُتھُے کۅکر سند ’کرٛو‘ کنن گوٚو، تمہ گٔے پننہِ پننہِ شایہِ روزتھ ہشہ تہ أمس کُن لجہِ شکہ بٔرژو نظرو وُچھنہِ۔ اکہِ کۅکرِ ہیٚوت ڈالہ مٲرۍ مٲرۍ أمس کُن پکن۔ مگر یۅہے بہ ماے پٲٹھۍ ہیو۔ زنتہ پننس مزس منز اور یور ٲس پھیران۔ بیاکھ کۅکر یۅسہ سُر بوٚنس تچھان ٲس، لٔج پانس جتھُر کٔرتھ بیٚیہِ لژھ کھارنہِ۔ زنتہ یل دِتھ ووٚنن۔ ’اونہہ۔ میہ دوٚپ خبر کُس چُھ۔ ٲسۍتن یُس چُھہ تہ سُہ۔ میہ کیاہ توتہِ۔‘ ییتِس کالس منز درایہِ شاہہ مال توٚملہ دۅژھا ہٮتھ تہ ترٲون أمس کۅکرس برونٹھ کُن۔
کۅکر لوٚگ بوٚچھ سندۍ پٲٹھۍ ہۅبٮو ہۅبٮو بوس برنہِ زن ژور کال ٲسس کینہہ بُتھہِ ؤچھنس گٲمتۍ۔ کۅکرٮو ییٚلہِ وُچھ زِ أمس ہا سپز کیاہ تام الگے یٲری، تمو نیہِ شی کٔرتھ دور تہ دٔچھنۍ کھوؤرۍ لجہِ چھکرنہ آمتٍۍ پھٔلۍ وٹنہِ۔ شاہہ مالہِ تُج بییٚہِ ہمسایہِ مکانچہِ دارِ کُن نظر۔ مگر اتہِ ییٚلہِ نہ کانہہ تہِ نظرِ گوس، امہِ دِژ زور کرٮکھا۔
’شی، تۅہہِ مٔرۍچہِ بٔڈ۔ أمس بچارس وتھ لجمژ، اد تہۍ دیوسا پھل پھلۍ کھٮنہ۔ زن نہ کینہہ تہِ چھو کھٮوان۔‘ کۅکرِ ژجہ امہِ کریکہِ ’کر ٛت‘ کٔرتھ پتھ۔ تمن توٚگ بوزن زِ یہِ کس چھیہ ونان۔ مگر اُکن پہن ژٔلتھ پھیرِ بییٚہِ پوٚت تہ کۅکرس أندۍ پکھۍ لجہِ کھوژۍ کھوژۍ پھٔلۍ ڈونہِ۔
’مبارک ہو شاہو۔ یہِ کرو اوٚن وون کۅکُر؟‘ جانہ بِژِ کوٚرس دارِ کنۍ نیرتھ آلو۔ شاہہ مال ٲس اسندۍ سے نیرنس پراران۔ امہِ رٔٹ چال۔ پھٮرنس دِژن برونٹھۍ کنۍ بٔلۍ دننا تہ کنس اندر رۅپہ کنہ وٲج نژ ناوان نژناوان ؤژھس در جواب۔
’ونۍ ہو اوٚن، یتھے پٲٹھۍ۔ ساڑن ژۅن ڈبلن۔‘ شاہہ مالہِ تروو ’ڈبلن‘ لفظس پٮٹھ تیوت زور یوت نہ غلام خانن تہِ أمس وننہ وِزِ ترایوو۔
’گامک آسہِ؟‘ جانہ بِژِ ووٚنس اور پھیرتھ۔ ’تی چھُم باسان، أر کۅکر ہن چھیہ۔‘
’توتہِ ہو چُھے یہِ ونہِ ستنے رٮتن ہند۔‘ شاہہ مالہِ کٔرس پانے وٲنسا کھر۔ ’یہِ ہو چھے بدل ذاتھ۔ یور چھا شہرس منز یمن کٔننہِ انان۔ تو پتہ یوت دروگ کُس ہییٚکھ مٔلۍ۔ ییٚتہِ گژھن یمے ژھۅٹہ کۅکر آسنۍ۔‘
شاہہ مالہِ وُچھ زِ جانہ بِژ وۅزلیٚۍ۔ ظاہر توٚگس بوزن زِ یہِ چھیہ لوکن کُن لٲگتھ یہِ میہ کُن ونان۔ سۅ ؤژھس ۔ ’اد با میہ چُھے سیُن بگارس، بر ژ أمس بوس۔‘ یہِ ؤنتھ ژایہِ سۅ اندر۔ اسندِ گژھنہ پتہ کوٚر شاہہ مالہِ اسہ ونہِ ہۅنجہِ وُٹھن بروٚڈ ہیو تہ أتھۍ ستٍۍ ہیٚوتن کۅکرس تھلہِ تھلہِ وُچھن۔
کتھ ٲس ژکہِ تلہ یہِ زِ شاہہ مالہِ اوس یہِ کۅکر جانہ بِژِ ہندِ شر انہ نوومت۔ جانہ بِژِ آسہ پانژھ کۅکرِ تہ اکھ کۅکُر تہ شاہہ مالہِ آسہ کۅکرے آژ۔ جانہ بِژِ ہند کۅکُر اوس دۅہس منز اکہِ دۅیہِ پھرِ پننہِ آنگنہ منز دۅسہِ پٮٹھ وُپھ تلان تہ تو پتہ شاہہ مالہِ ہندس آنگنس منز وسان۔ شاہہ مال ٲس پنن کۅکُر نہ آسنہ کنۍ اتھ خدٲیی یٲری زانان۔ مگر یٚمہِ وِزِ شاہہ مال آنگنس منز دانہِ یا بییٚہِ کانہہ یُتھ چیز تاپس تراوِہے، یہِ اوسس دۅن أچھن کھران۔ تکیازِ یہِ اوسس برٲژ در ہیو اگادِ گژھان۔ چھگ دی دی تہِ اوسس نہ یہِ چھلہ ؤدرۍ کرنس پژان۔ پچھ کھنڈ برونہہ ییٚلہِ أمۍ یتھے پٲٹھۍ سخ جیر تُلُس، شاہہ مال متے یس بہ حکمن وۅہون۔ جانہ بِژِ بوز تہ سۅ درایس دارِ کنۍ واد کرنہِ تہ أتھۍ منز دژنس پام۔
’تیٚلہِ ہو گژھہِ پنن کۅکُر انن۔ بوز تھو۔ ہُتھ ییٚلہِ مٲل خۅر چھہِ ہس روزان، داں پھلہِ کتھ چُھے زو نیران!‘
شاہہ مالہِ گوٚو اسند یہِ ونُن موتہ کۅتہ سخ۔ یہِ گٔے امی ساعتہ پیٹھہ خاندارس کۅکُر مٔلۍ اننہ کھٲتر نٲلۍ۔ پٮٹھہ کٔر جانہ بِژِ تہِ اتہِ اور أہندس آنگنس منز کۅکرس گژھنس رٲچھۍ۔ غلام خانن کجاو پوٚز اپز ؤنۍ ؤنۍ پچھ کھنڈ، مگر ٲخرس تہ لوٚگس نہ چار تہ مایسمہِ بازر منز ہیوٚتن أکس کۅکر وٲلس نشہِ ترٮن ڈبلن یہِ مٔلۍ۔ اگرچہِ زنانہِ نشہِ تھٲونس رۅپے کھنڈ زیادے پہن کھٲلتھ، یُتھ نہ سۅ پٮٹھے ونٮس۔ ’وُچھ اور کیتھ کۅکر آکھ ہٮتھ۔ زن نہ بییٚہِ کُنہِ تہِ بنیووُے!‘
جانہ بِژِ ہند کۅکُر اوس مٲنزِ رنگہ، وۅزل تہ منزۍ منزۍ آسس کریہنہِ تیر تہِ۔ شاہہ مالہِ ہند کۅکر اوس چھوٚت، صفا شین نپہ نپہ کروُن پروٚن۔ چالہِ ڈالہِ کنۍ اوس یہِ جانہِ بِژِ ہندس کۅکرس پووا کھسۍتھے ، مگر تتھے اوس سُہ اسندِ کھۅتہ نل نکھہ کنۍ زیاد اوٚر دوٚر باسان۔ یہِ اوس پزر، نتہ ٲسۍ دۅنوے اکی ذٲژ ہندۍ۔ ز ژور آنہ کم یا ژور آنہ زیاد اکی مۅلہ تہِ۔
دۅہ گژھتھ شامس ییٚلہِ سٲری شونگۍ، شاہہ مال ٲس بسترس منز شُرس لرِ سٲوتھ دۅد چاوان۔ امہِ اوس شاند گوٚندس پٮٹھ کھۅنہ وٹھ ٹھیکرٲوتھ اتھس پٮٹھ کلک سورے بار روٚٹمت۔ یتھہ کنہِ ٲس یہِ شُرس دۅد چاوان، مگر اندرۍ اندرۍ ٲس یہِ أمۍ سے کۅکر سند سونچان۔۔۔کۅکُر وُچھتھ کیاہ آسٮس بِژِ وٲنجہِ نون پیومت۔ میٚۍ ونہِ تہِ اسنز سۅ کتھ اوم تیل چھیہ تیلان۔ وۅنۍ گژھہِ اسنُد کۅکُر یور ترُن، زنگہِ نشہِ نے کوٚرم تیٚلہِ چھسے نہِ اد۔ یی سونچان سونچان پییٚہِ أمس خاندار سندس بتھس کُن نظر، یُس الگ کُن پننس بسترس منز شونگتھ اوس۔ أمس آو یہِ امہِ وِزِ تیتھ خۅش شکل بوزنہ زِ وننچ کتھ چھیہ نہ۔ مگر یُتھے امہِ کھۅنہ وٹھ کڈتھ شاند گوٚندس پٮٹھ کلہ تراٍوتھ شۅنگن ہیژاو، کۅکر مرِ منز گٔے تھدِ تھزے بانگ ’کۅکروکوں،ں،ں،ں‘۔
شاہہ مال گٔے ہے بنگہ روزتھ۔ امہِ تُل کلہ تھوٚد تہ وارپٲٹھۍ لٔج نوزنہِ زِ میٚۍ ما گوٚو بدل کینہہ کنن۔ مگر ییٚلہِ کۅلکرن بیاکھ بانگ تہِ دژ، أمس زن پھُٹ کٲر۔ یہِ گٔے یکبارگی بسترس منز بہتھ تہ خاندارس لٔج آلو دتھ ہشار کرنہِ۔
’ہتہ دوٚپمے۔ تلہ تھوٚد وۅتھ۔ یپٲرۍ۔‘
’ہونہہ، کیازِ؟‘ غلام خان گوٚو اڈہشار ہیو۔ ژیہ ووٚنتھہ میہ کینہہ؟‘
’ہتہ أمۍ دژ کۅکرن بانگ، کالہ کی پہر۔‘ شاہہ مال ٲس بانبرے مژ۔ ’ یہِ کُس پھیٚشل بلایہِ چھُتھ ژیہ اونمت؟‘
’بانگ؟‘ غلام خانن چونکھروو بُتھ۔ ’اد دژن، اسہِ کۅسہ سحر خٲنی چھیہ کرنۍتتھۍ گژھہ وقتہ پھیر۔‘
’وُچھ اور کیاہ ونہِ۔‘ شاہہ مالہِ کٔھژ ژکھ۔ ’ہتہ تھوٚد وۅتھ۔ کھش شھنس کٔرتھ۔ ژیہ چھے نا خبر، یُس کۅکُر کالہ کی پہر بانگ دِیہِ، تس گژھہِ تمی وِزِ کھش کرُن۔ سُہ چُھہ پھیٚشل آسان۔‘
’کینہہ چُھہ نہ پھیٚشل ویٚشل آسان۔ ژۅنگ پانس ژھۅپہ کرتھ۔ یمن بے قلۍ کتھن ٲزِ نہ گژھان۔‘ یہِ ونان ونان ہیٚژ غلام خانن کلہ پٮٹھۍ رضٲۍ۔ شاہہ مالہِ کریایہِ پننۍ کنۍ واریاہ ژھرٹہ ژھرٹھ، مگر غلام خانن نہ ووٚنس اتہِ اور اکھ تہ نہ ز۔ تٔمۍ ترٲو کھۅر شۅر نندر تہ پننس وقتس پٮٹھ گوٚو صبحس ستہِ بجہِ ہشیار۔
شاہہ مالہِ یوت نہ أمس کۅکر سنزِ امہِ بانگہِ ہند گوٚو، تیوت گوس وۅنۍ یمہِ کتھہِ ہند زِ ہرگاہ جانہ بِژِ یہِ بانگ بوزمژ آسہِ، سۅ کرٮم پامہ دی دی گٔدۍ۔ سۅ ونٮم زِ أتھۍ پٮٹھ ٲسکھے ونان زِ یُتھے کۅکُر کیاہ ٲسس بہ ژھاران۔ دنیاہ جہانکۍ کۅکر چھہِ سحر پٔتۍ صبحکہِ نورچ خۅش خبر دوان، أمس منحوسس وُچھتہ کالے کیاہ چُھہ نستہِ کنۍ اژان۔
جانہ بِژِ ہندِ امہِ خوفہ مۅکھے درایہِ نہ شاہہ مال کۅکر مٔرس درواز مژرٲوتھ تہ کۅکر یلہ ترٲبتھ آنگنس منز۔ حالا نکہ سۅ روزِہے نہ اتھ زنہہ تہِ پتھ، تکیازِ تس اوس وُنہِ خبر کٔژن دۅہن دۅسن تہ دیوارن کُن کتھہ دی دی جانہ بِژِ آنچ ہورن۔ یہِ روز وُزس منزے ژھایہِ ہلس کُن تہ کۅکرن نیہِ شی کٔرتھ کۅکرٮن ستٍۍ آنگنس منز ژھال۔ شاہہ مالہِ پھیر أمس کُن وُچھتھ وٲنج دُبہ۔ تیتھ کھوٚرس یہِ۔ کۅکرن کۅڈ شپۍواو کٔرتھ پکھن واشا ووشا۔ أکس پکھہِ بنٲون واوج تہ ماے محبتہ سان دِژن کۅکرٮن أندۍ أندۍ اوٚک اوٚک وارِ ڈالہ پونشہ۔ کۅکرِ ژجہِ دامن بچٲوتھ دٔچھن کھوور، زنتہ ووٚنہس۔’ہے کیاہ گوٚوے۔ یی چھا کران۔ پتھ برونٹھ چھکھ نہ وُچھانے کینہہ۔‘
کۅکرٮو ہیٚژ وُز برس کُن نظر دِنہِ زِ اما از کیا چھیہ نہ یہِ کُنہِ نٔنی۔ پھل مۅٹھ تہِ ترٲون نہ۔ تمو ہیٚوت شاہہ مالہِ اورۍ دورن۔ کۅکرس تہِ توٚر فکرِ زِ قصہ کیاہ آسہِ۔ تٔمۍ تہِ رٔٹ کۅکرٮن ہنزے وتھ۔ شاہہ مالہِ ییٚلہِ اسنزن زنگن کُن نظر پییٚہِ، أمۍ ژکہ نوو دے گٔژھتھ بُتھ۔ أمس آیہِ اسنز یمہ زنگہ پنجو پٮٹھہ باوڑِ تام کھرِ ژکل ہِشہِ درینٹھۍ۔ مگر شی شو ہیٚوکنس نہ کینہہ تہِ کٔرتھ، یُتھ زن جانہ بِژ بوزِ نہ۔ امہِ کٔڑ جل جل توٚملہ دۅژھا تہ وُز منزے دژنکھ آنگنس کُن دٲرتھ۔
جانہ بِژِ ہندِ آنگنہ منز ییٚلہِ تسندۍ کۅکرن دۅسہِ یپارِ نوٚوے کۅکر ’کروا‘ بوز، تس گٔے گردن کھڑا۔ تٔمۍ کوٚڈ سینہ نٮبر تہ پان ترکروون زنتہ بدنکۍ سٲری نٲر شروکونہ آیس۔
’کُٹ، کُٹاک، کُٹاک۔‘ تس ژٔج تھدِ کرٮکھ نیرتھ۔ زن کوٚرنس آلو زِ ہیو کُسو پٮژِڈار چھُکھ ژ اپٲرۍمس آنگنس اندر ژامت۔
’کُٹاک، کُٹ کُٹ،کُٹاک۔‘ شاہ مالہِ ہندۍ کۅکرن تہِ کٔر گردن کھڑا۔ ظاہر دیتنس جواب۔ ’ بہ ہا چھُس چھوٚت کۅکُر۔ کتہِ ترکھ یپورتہ ہاوے۔ نتہ چھُہم دوری مشتہ ہاوان۔‘
شاہہ مالہِ کھوٚر اسند یہِ کریکہ ناد لاگن۔ سۅ دپان یہِ ہے کُنہِ پٲٹھۍ دم پُھٹۍ گژھہِ ہے، دٮو نہ جانہ بِژ اسنز آواز بوزتھ دارِ اویزان گژھہِ۔ أمس شی کرنہ بدلہ تُج امہِ وُز منزے مٮژِ دتھ تہ کشہِ سان لٲۍنس پننۍ کنۍ کلس۔ سۅ آیہِ نہ أمس کینہہ تہِ، البتہ أمۍ کھییٚہِ ’کُٹاک‘ کٔرتھ وۅٹھ تہ جانہ بِژِ کوٚڈ دارِ کنۍ کلہ۔
’ژیہ کتھو پٮٹھ از صبحے صبحے شرارتھ کٔھژمژ۔ کوٚرنے کیاہ بچٲرۍ!‘
شاہہ مال زن رٔٹکھ ژورِ، تتھے پٲٹھۍ پھوٚٹس رمن رمن عرق۔ امہِ یمہِ مۅکھہ یوت ایحتیاط کریاو، سُہ رددس سورے طاقچس پٮٹھ۔ جانہ بِژِ ہنزِ کتھہِ تلہ گوٚوأمس شبہ زِ یہِ چھم ورگہ پٲٹھۍ ٹسنہ ژٹان زِ یہِ چھیہ اسندِ کالہ کی پہر بانگ دنچ شرارتھ۔ مگر توتہ کوٚرن کیاہ تام ژور جگرے ہیو تہ ووٚننس۔
’یہِ ناو دوان یمن کۅکرٮن پھلس لُن پکنہ تہِ۔ شرارتھ کٮہوزِ گٔژھم نہ آسنۍ!‘
’نوٚو نوٚوے چُھنا توے۔‘ جانہ بِژِ ووٚنس ٹھٹھہ پٲٹھۍ۔’پگہہ پٮٹھہ آپراوٮکھ یورے۔‘
’اہانو تہ گوٚژھ اسہِ رچھن آسُن۔ تتھ چُھ کھٮنہ خٲطر اوٚنمت۔‘ شاہہ مالہِ دوٚپ زِ أمس تھاو نہ بہ کانہہ کتھ ونہ نسے وار۔ ’تٔمۍ آسہِ ہے راتھے حلٲلۍ کوٚرمت، مگر سُہ اوس تھٔکتھ پیومت۔‘
’کٮہو رووو، مٲریون کیاز؟‘ جانہ بِژِ ووٚننس۔ ’وُچھ کژھ شکلہِ ہن چھٔس۔ پٮٹھہ چھس آوارز تہِ رٔژ۔‘
شاہہ مالہِ ڈوٚل بُتھیک رنگ۔ تمہِ نیو اسندِ ’رٔژ آوارز‘ وننہ منزے تُلتھ زِ امہِ چھیہ اسنز سۅ بانگ بوزمژ۔ مگر اورکُن اتھہ ننہ بدلہ ؤژھس بییٚہِ۔
’او یتھۍ ژھۅٹہ کۅکر ییلہِ میہ رچھنۍ آسہ ہن تیلیٚۍ کتٍۍ کننۍ ٲسۍ پھیران۔ میہ یُس کۅکُر أمس انن ونیاو، سُہ چُھس نہ وُنہِ تہِ بدس یوان۔ وۅنۍ چُھس کٔمۍ تام وعد کوٚرمت زِ یِتھہ زٲنتھ تتھہ دمنے بہم کٔرتھ۔ ‘ شاہہ مالہِ باسٮو زِ جانہ بِژ رٲو ہش اسند یہِ جواب بوزتھ۔ امہِ دوٚپ زِ یُتھ یہِ اور خبر کیاہ ونٮم بہتر چُھہ پانس اندر اژُن۔
شاہہ مالہِ ہیوٚت أندر کنہِ سماوارس تیٚونگل تراوُن، مگر ٲس أمۍ سے کۅکر سندس سیاپس سنیمژ۔ تہ ییلہِ غلام خان مٔشدِ پٮٹھہ اتھہ بُتھ چھلتھ گر ژاو، شاہہ مالہِ پھیرُس چیایہِ پیالہ تہ ووٚننس۔ ’چاے چٮتھ ژٔھنتہ أمس کۅکرس کھش کٔرتھ۔ محلس منزے لسن بسن چُھ۔‘
’اہانی تہ محلس کیاہ اتھ ستٍۍ۔‘ غلام خان ووٚتھس لواسہ کٔھنڈا ژاپان ژاپان۔ ’روز دٲری چھیہ نہ زِ سحر وقتک چُھکھ مغالطہ گژھان۔‘
’ژیہ کیاہ ، ژیہ چھے کتھے آژ ۔‘ شاہہ مالہِ کٔھژ ژکھ۔ ’اد ییلہِ نہ ژ مارہن بہ کر ناوس پانے صمدۍ کھشس اتھہِ کھش۔ دٮو یہِ پھیٚشل بلایہِ رچھن۔‘
’کر ناوُس۔‘ غلام خانن کٔر ژٹہ ونۍ کتھ۔ ’مگر یُتھ نہ پتہ بییٚہِ نوٚو کۅکُر اننچ فرمٲیش آسٮم!‘
’کینہہ کرے نہ فرٲیش۔‘ شاہہ مالہِ دتۍ بٔلۍ سماوارس پھۅکھ پونشہِ۔ ’یہ کیاہ جانہ بِژِ ہند کۅکُر ہے دوٚہۍ دۅہس آنگنس منزے آسان۔‘
غلام خان ییلہِ کامہِ دراو شاہہ مال ؤژھ تہ گٔے صمدۍ کھشس گر، یہِ وچھنہ مۅکھہ زِ تتھۍ چھا کِنہ اور یور چُھہ کُن درامت۔صمدۍ کھشہِ اوس محلہ کٮن کۅکرن ہند کھشہ ملہ۔ ا۔مس ورٲے تہِ ٲسۍ واریاہ کھش کرُن زانان مگر ا۔مس اوس وۅنۍ کیاہ تام ناوے ہیو لوٚگمت۔ توے تہ اوس اتہِ کۅکرن ’شی ژیہ صمدۍ کھشہِ پیٚون‘ ویتھ وۅہو کڈنہ یوان۔ صمدۍ کھشہِ اوس امہِ وِزِ گری تہ دارِ پٮٹھے ووٚنن شاہہ مالہِ۔
’گژھ با انن بہ کرس کھش۔ مگر بہ تہِ کیاہ ووت سو شامس بٲگۍ۔ ینہ دٔپو زے بٲژ کھٮمون، او۔‘
’اد یِتہ ژیہ کٔمۍ کوٚرے ٹھاک۔ چانہِ کھۅتے چھا۔‘ شاہہ مالہِ ووٚنس جواب تہ اسان اسان آیہِ گر واپس۔ یہِ ٲس خۅش زِ جانہ بِژِ نشہِ روزم نس سیٚود۔ نتہ آسم وۅنۍ کالہ صبح تسنز پامہ بوزنہِ۔
شاہہ مال یُتھے اور پھیرتھ آنگنس منز ژایہِ، اتہِ وچھُن بدلے حالاہ گوٚمت۔ بچار کۅکرِ أکس اندس کُن شروٚکنٮن ژامژ۔ جانہ بِژِ ہندۍ کۅکرن أہندس کۅکرس ستٍۍ سخ پٲٹھۍ جنگ لوگمت۔ یمو سۅ قیامت پانہ وٲنۍ ملہ نٲومژ تہ سہُ گردِ بشتنگہ تُلۍ متۍ زِ کُنس خدایس چھیہ خبر۔ پٮٹھہ جانہ بِژ دارِ پٮٹھ بہت أہنزِ اتھ لڑایہِ تماشہ وچھان۔
شاہہ مالہِ باسٮو زِ جانہ بِژ چھیہ أندرۍ کنۍ خۅش۔ تس چُھہ پور یقین زِ میون کۅکُر چُھ زینتھ۔ تکیازِ سُہ اوس نلہ نکھہ کنۍ رٲنڈۍ ہیو باسان۔ بییٚہِ ٲسِن محلکۍ سٲری کۅکر اکہِ اکہِ آنپہ منگہ نٲوۍ متۍ۔ شاہہ مالہِ ہیٚوتن وٲنجہِ دُب دُب گژھن تہ بُتھس اکہِ رنگہ بیاکھ رنگ سپدن۔
جانہ بِژِ ہند کۅکُر اوس وۅزل تہ شاہہ مالہِ ہند چھوٚت۔ یمن آسہ گردنہِ ہنز تیرِ پور دٲیرن منز کھڑا گٲمژ۔ شرارتہ ستٍۍ ٲسکھ کلن نٹھ نٹھ تہ تھتھرایہِ۔ امہِ تھتھرایہِ ستٍۍ آسہ یمن گردنہِ ہنزن تیرٮن بجلی کرنٹہ ہشہِ یوان۔ ندن ٲسکھ زیٹھے متۍ پھوتٮن واش ہیو درامت۔ یم ٲسۍ اکھ أکس مقابلہ روزتھ تہ تھتھرایہِ ہژ گردنہ زیٹھہ رٲوتھ اور یور نار شیٚچھہ باوان۔ تہ أتھۍ اندر بہ پرسان پٲٹھۍ اکھ أکس جف ژھنان تہ تونتو ستٍۍ ہڑدُس بڑدُس تُلان۔
جانہ بِژِ ییلہِ شاہہ مال آنگنس منز اژان بُچھ، سۅ بیٹھ وار پٲٹھۍ دارِ پٮٹھ۔ شاہہ مالہِ باسٮو زِ امہِ روٚٹ چاو۔ جانہ بِژ وژھس۔ ’یہِ چھکھو وچھان۔ اد با میون یہِ ژھۅٹہ کۅکُر کیاہ پوشہِ أمس چٲنس کۅکرس۔ مگر کٔھرِس کیاہ ہیہ پانژھ تہ دِ پانژھ کُنی۔ اما پوٚز یتہِ ونے ژلہ راوٮس۔ تہِ چھن محلکۍ کۅکر دٮد وننٲوۍ متٍۍ۔‘
شاہہ مالہِ گوٚو أندری ہیہ، مگر ونہِ ہٮس کیاہ۔ یہِ ٲس پچھتاوان زِ یتھ کیاہ گوٚو یہِ۔ أمس گوٚو شکھ زِ جانہ بِژِ چُھ زٲنتھ مٲنتھ پنن کۅکُر یور تروومت۔ أمس ٲس وٲنج نوہ نوہ کران زِ وۅتھہ تہ چیر أمس جانہ بِژِ ہندس کۅکرس ہوٚٹ۔ امہِ سوانچ زِ یُتھ یہِ پتہ پام دِیم تیتھ کونہ تھاوس بہ برونٹھے لور پٮٹھ۔ یہِ ؤژھس۔ ’ میون یہِ کۅکپر لگہِ نہ اتھ جنگہ جنگہِ۔ یہِ چھنا بدل ذات، توے چُھ دروگ تہِ۔‘
کۅکرو لٲج ہڑدُس تہ بڑدُس تُلۍ تُلۍ قیامت۔ یم ٲسۍ اکھ أکس رتھ والان تہ تیرِ کٔھنزان۔ جانہ بِژ ٲس دارِ ہندس دمس زور سان تھف کٔرتھ کلس نوہ تہ نوہ کران۔ شاہہ مالہِ اوس بُتھ أتۍ نے نار چپاتھ ہیو گژھان تہ أتۍ نے لیٚودر پوش ہیو گژھان۔ سۅ ٲس أندرۍ کِنۍ اتھہ موران تہ زہر ژاپان۔ بلکہ ٲس وُٹھ پھسرارے کٔرتھ جانہ بِژِ حندس کۅکرس وۅہوان۔ ’گژھ ژیہ تونتھ پیٚنۍ ؤستھ۔ ژیہ زنگن وج گژھُن۔‘
کۅکرو ول اکھ أکس رتھ۔ جانہ بِژِ ہندس کۅکرس اوس نہ وۅزُل رنگ آسنہ کنۍ بوزنہ یوان زِ کوتاہ آس تہ کیاہ آس۔ مگر شاہہ مالہِ ہند کۅکُر اوس وھوٚت آسنہ مۅکھہ خونے خون گوٚمت باسان۔ اسند یہِ حال وُچھتھ رود نہ وونۍ شاہہ مالہِ پانس تام کینہہ تہِ۔ أمس ژوٚل نیرتھ۔
’ہہ یہِ چانہِ رتہ چھیٚپہِ لگُن۔ وُچھ کُس حال کوٚرنے۔ أ،س پییٚہِ یہِ تونتھ ؤستھ۔‘
’اوٚت پٮٹھ کوٚتو وٲژکھ۔ وُنہِ کیا گوٚو۔ وُنہِ وُچھ ییلہِ دٮد ونناوٮس۔‘ جانہ بِژِ کوٚرس واد۔
شاہہ مالہِ اوس وۅنۍ جانِ منس پٮٹھ آمت۔ أمس اوس کالہ پٮٹھے اکہِ پتہ اکھ حٲرۍثاتھ بٔنتھ آمت۔ یہِ دِیہِ ہے جانہ بِژِ خبر کیاہ ٹیٚوٹھ جواب یتھ نہ جانہ بِژ تہِ ژھۅپہ کرِہے۔ تہ یہنز یہِ أندرۍ جنگہ جنگ واتہے وۅہون تہ بکواسس پٮٹھ، زِ ہنگہ تہ منگہ ژوٚل اکھ کۅکُر۔ یہِ اوس جانہ بِژِ ہند تہ شاہہ مالہِ ہندۍ کۅکرن ہیٚژس سٲرۍسے آنگنس لار لار کرنۍ۔ شاہہ مالہِ باسٮو زِ جانہ بِژِ ژٔج عرقہ ژھٹھ نیرتھ تہ بُتھ گوس تمنۍ تٲو ہیو، مگر پنن ژٮتھ رچھنہ خٲطر کوٚرن بُکر دوٚر زن نہ اتھ جنگہ جنگہِ ستٍۍ کانہہ تہِ غرض اوسس۔
’اد با تہ یۅہے کۅکُر مٲریونا۔‘ جانہ بِژِ ووٚنس اتھہ ہۅنگنہِ دتھ۔ ’میونے بوزو، رٔچھون، مہ مٲریون!‘
’نتہ بوز تھو ژیہ پوٚزے۔‘ شاہہ مال ؤژھس رۅپہ کنہ وٲج نژناوان۔ ’ میہ نشہِ ٲسۍتن کۅکرس ہتھ ناصفتہ۔ کالہ کی پہر دی تن بانگ، میہ چھی نہ تمکۍ غم۔ مگر جنگہ جنگہِ کیت گژھہِ سخ آسُن۔ بہ ٲس سے یتھُے کۅکُڑ ژھاران!